rural women try for girls education 78

تھرپارکر: دیہی خواتیں اب مردوں کے ساتھ بچیوں کی تعلیم دلانے کے لئے کوشیشیں کرنے لگیں

مریم صدیقہ نیوز ڈائریکٹر انقلاب نیوز تھرپارکر

تعلیم حاصل کرنا سب کا حق کے تھرپارکر کی دیہی خواتیں بھی اب مردوں کے ساتھ بچیوں کی تعلیم دلانے کے لئے کوشیشیں کرنے لگی ہیں تھرپارکر جھاں پر بنیادی سھولیات سے محروم تو ہے ہی مگر یہان پر خواتیں میں شرع خواندگی بہی نہ ہونے کی برابر ہے یہاں پر نہ تو حکومت کی جانب سے لڑکیوں کی تعلیم پر توجہ دی جاتی ہے اور نہ ہی والدین اس طرف دھیان دیتے ہیں مگر اس بار تھرکی دیہی اور تعلیم سے محروم خواتیں اور نوجوان لڑکیاں بھی لڑکیوں کی تعلیم کے لئے کوشان نظر آرھی ہیں تھر میں کام کرنے والے مقامی ادرے سول سوسائٹی سپورٹ پروگرام کے تحت داخلہ مھم میں کے تربیت لینے لگی ہیں تھری خوا تیں کا کھنا ہے کہ ہم تعیلم حاصل نہین کر سکی مگر اب ہم چاھتی ہیں کہ ہماری بچیاں تعلیم حاصل کریں اور اپنی زندگی اچھی طرح گزار سکیں ۔امامت خاتوں بھی اس پر پرعزم تھی اور کہا ۔۔ہم چھاتے ہین کہ ہمارے گائوں میں زیادہ سے زیادہ بچیاں تعلیم حاصل ہم اپنے اپنے گائوں جار داخلہ مھم کے لیئے گائوں کے لوگوں اپنے بچیوں تعلیم دلانے کے لئے توجہ دلانا چھاتے ہیں

غلام محمد۔۔تعلقہ آفیسر ایجیوکیشن ڈیپلو۔۔ نے بھی اس اقدام کو سرہاتے ہوے کہا کہ
اس سے بچوں کی حوصلہ افزائی ہوگی اور جو بچے اسکوں سے باھر ان کو داخل کرانے بھتر مدد ملے گی
ناما بائی کا کھنا تھا کہ۔۔۔ہمارے گائوں میں لڑکیوں کا سکول نہین ہے اور ہم چاھتے ہیں بچیاں زیادہ سے زیادہ تعلیم حاصل کریں تاکہ معاشرہ میں بھتری آ سکے
سارنگ رام ۔۔سول سوسائیٹی سپورٹ پروگرام کے مٹھی کے کوآرڈینیٹر نے انقلاب نیوز کو بتایاکہ ہم کوشش کررہے ہیں ایک تو تھریں بند لڑکیوں کے اسکول کھل جائیں اور اس بار ہم کوشش کرہے ہیں کہ لڑکیوں کی داخلہ زیادہ سے زیادہ ہو تھری خواتیں کےاس عزم سے ظاھر ہوتا ہے کہ اب وہ اپنے بچیوں کو بھتر تعلیم دلانے میں بھی کامیاب ہو سکتی

اپنی رائے دیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں