31

تھرپارکر : ڈپٹی کمشنر کی سول اسپتال مٹھی میں کھلی کچہری۔مریضون نے شکایتوں کے انبار لگادیئے۔

مریم صدیقہ نیوز ڈائریکٹر انقلاب نیوز تھرپارکر
ڈپٹی کمشنر شکایتیں سن سن کر تنگ آکر روانہ ہوگیے۔تھرپارکر کے ڈپٹی کمشنر ڈاکٹر شہزاد تھہیم نے سول اسپتال مٹھی میں مریضوں اور لواحقین کے مسائل سننے کے لیے کھلی کچہری کا انقعاد کیا۔جہاں پر مریضوں اور لواحقین نے شکایتوں کے انبار کردیئے۔مریضون کے لواحقین نے سول اسپتال انتظامیہ کے خلاف شکایت کرتے کہا کہ اسپتال میں بیڈ کی علاوہ کوئی سہولیت نہیں ہے۔ہر مریض کو چند لوکل کمپنیوں کی ادویات دی جاتی ہیں،اسپتال میں نہ کوئی ٹیسٹ ہوتی ہے اور نہ ہی ایمبولینس کی سروس دی جاتی ہے۔سول اسپتال مٹھی میں ادویہ نہ ہونے کے باعث ڈاکٹروں کا رویہ بھی تندرست نہیں،نجی کلینک بند کرانے بعد ڈاکٹر بھی مریضوں سے بدتمیزی کرتے ہیں،اس طرح ہر مریض کے لواحق نے اپنا درد سنانا شروع کردیا تو ڈپٹی کمشنر بھی تنگ آگئے اور اٹھ کر روانہ ہوگئے۔کھلی کچہری میں مسائل کی نشاندھی کرنے پر ڈی سی کے جانے بعد ایڈیشنل میڈیکل سپریٹیڈنٹ ڈاکٹر چمن شرما نے کوریج کے لیے گئے ہوئے میڈیا نمائندوں کو دھمکیاں دے اور بدتمیزی کی کہ میڈیا جو بھی لکھتا اور بولتا ہے،ہم پر ابھی تک نہ کوئی فرق پڑا ہے اور نہ کوئی فرق پڑنے والا ہے واضع رہے کہ ایڈیشنل میڈیکل سپریڈنٹ چمن شرما ایک مافیا جوکہ سول اسپتال مٹھی کو ملنے فنڈز میں خردبرد کرنے ساتھ اندرون سندہ سے آنے ڈاکٹرز اور لیڈی ڈاکٹرز بھی تنگ کرتا ہے اور میڈیا کے بات کرنے پر اپنی حرکتیں چھپانے کے لئے میڈیا کے نماندگان پر برہم ہوجاتا ہے برے انجام بھگتنے کی دہمکیان دیتا ہے

اپنی رائے دیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں